158

اہم خبر،نوازشریف اور عمران خان میں سے مارک انٹونی کون ہے؟ نوجوان خاتون مضمون نگار کی ایک شاندار تحریر ملاحظہ کیجیے

لاہور(نیوزڈیسک)شیکسپئر کا ایک ڈرامہ شاہکار سمجھا جاتا ہے جس کو لوگ ”جولیس سیزر“ کے نام سے جانتے ہیں۔ اس میں مارک انٹونی کی ایک تقریر بڑی اہم ہے جو وہ سیزر کی تدفین سے پہلے کرتا ہے، یہ تقریر مارک انٹونی اپنے مخالف اور دشمنی میں مشتعل جذبات رکھنے والے ہجوم سے کرتا ہے۔ نامورکالم نگارعائشہ مسعود اپنے ایک کالم میں لکھتے ہیں۔۔۔لیکن یہ تقریر اتنی پُراثر ہوتی ہے کہ مخالف مجمع مارک انٹونی کی حمایت میں بھی ہو جاتا ہے اور اس قدر ساتھی بن جاتا ہے کہ مخالفین کے گھروں کو آگ لگانے چل پڑتا ہے اور یہ خوبی کسی بھی سیاستدان یا لیڈر میں ہونی چاہئے کیونکہ حمایتی افراد کو اکٹھا کرنا اور پھر تمام وسائل بروئے کار لا کر اپنے حمایت یافتہ افراد سے خطاب کرکے تالیاں بجوانا بھی بڑی بات ہو سکتی ہے مگر عظمت تو یہ ہے کہ مخالفین کے اندر جا کر اپنی بات کی جائے کہ وہ دل سے اتنے متاثر ہو جائیں کہ حمایت پر اتر آئیں اور یہ تبھی ہو سکتا ہے کہ یا تو مستقبل کے مسائل کا مضبوط حل‘ لیکن قابل عمل بنایا جائے یا پھر بولنے اور بات کرنے کا ایسا ہنر بھی ہو کہ بات لوگوں کے دل میں اتر جائے۔ یا پھر بیانیہ جو اپنایا جائے وہ اس قدر سچائی پر مبنی ہو کہ مجمع میں بیٹھا ہر شخص یا پھر کلام سننے والا ہر شخص اس سچائی کو دل سے تسلیم کر لے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں